اسٹیل ملز، ہیوی الیکٹریکل کمپلیکس کی نجکاری کے عمل میں پیش رفت

ویب ڈیسک
0 0
Read Time:2 Minute, 40 Second

اسلام آباد: کابینہ کمیٹی برائے نجکاری (سی سی او پی) نے ہیوی الیکٹریکل کمپلیکس (ایچ ای سی) کے 96.6 فیصد حصص کے فروخت کے اسٹرکچر کی منظوری دے دی اور پاکستان اسٹیل ملز (پی ایس ایم) کے لین دین کے اسٹرکچر کو بہتر بنانے کے لیے ایک کمیٹی تشکیل دے دی۔

سوہنی دھرتی اخبار کی رپورٹ کے مطابق وزیراعظم کے مشیر خزانہ ڈاکٹرعبدالحفیظ شیخ کی زیرصدارت سی سی او پی نے وزارت توانائی کو ہدایت کی کہ ہیوی الیکٹریکل کمپلیکس کے ٹائپ ٹیسٹنگ لائسنس میں توسیع کی بھی ہدایت کی۔

اجلاس میں وفاقی وزیر صنعت و پیداوار حماد اظہر کی سربراہی میں ایک کمیٹی کا قیام بھی عمل میں لایا گیا، کمیٹی مالیاتی مشیر کی مشاورت سے مارکیٹ کے تقاضوں کے مطابق پاکستان سٹیل ملزکے ٹرانزیکشن اسٹریکچر میں بہتری لانے کی ذمہ دار ہوگی،

کمیٹی نے ہاوس بلڈنگ فنانس کمپنی کی ٹرانزیکشن کی ساخت کی منظوری بھی دے دی۔

یہ فیصلہ پہلے ہی کیا جاچکا تھا تاہم وفاقی کابینہ نے اضافی معلومات کے حصول تک اس کی توثیق نہیں کی تھی۔

نجکاری کمیشن کی جانب سے کمیٹی کو بتایا گیا کہ اگر اس سودے کو آگے بڑھایا گیا تو نیا سرمایہ کار ہاؤس بلڈنگ فنانس کمپنی میں سرمایہ، آپریشنل مہارت، اورکمپنی کے نئے پراڈکٹ کی ترقی کو یقینی بنا سکتا ہے اس اقدام سے درمیانے اورکم آمدنی والے گروپس کے لیے ہاؤس مارگیج مارکیٹ میں کمپنی کے حصہ داری میں اضافہ ہوگا۔

کمیٹی نے نجکاری کمیشن بورڈ (پی سی بی) کی تجویز کو بھی منظوری دے دی جس میں نجکاری کمیشن کے چیئرمین / سیکریٹری کو اجازت دینے کا کہا گیا تھا کہ وہ نجکاری کے سودے پر عملدرآمد کے لیے شیڈول بینکوں میں اکاؤنٹس کھولنے، چلانے اور بند کرنے کے لیے کمیشن کے افسران کو اختیار دیں۔

وفاقی حکومت کی ملکیتی اراضیوں کی فروخت کے لیے نجکاری کمیشن کے مقرر کردہ مالیاتی مشیرنے کمیٹی کو نیلامی کی قیمت کے بارے میں بریفنگ دی اورسودوں کے باقی حصوں کو آگے بڑھانے کے لیے رہنمائی طلب کی۔

کمیٹی کو بتایا گیا کہ 27 اراضیوں میں سے 23 کی بولی کی قیمت موصول ہوچکی ہے۔

کمیٹی نے مالیاتی مشیر کو ملتان اور رحیم یارخان میں دو اراضیوں کی فروخت کے لیے طریقہ کار متعین کرنے کی ہدایت کی۔

کمیٹی نے سوات اور لاہور میں زیرالتوا دو اراضیوں کی فروخت سے متعلق مسائل کے حل کے لیے پنجاب اور خیبر پختونخوا کے چیف سیکرٹریز سے رابطہ کرنے کی بھی ہدایت کی۔

نجکاری کے عمل کو سہل اندازمیں آگے بڑھانے کے لیے کمیٹی نے ایک ماڈل سوالنامہ کی منظوری بھی دی جس میں نجکاری کے لیے منظورکردہ ادارہ سے متعلق تمام معلومات کے حصول میں مدد ملے گی۔

کمیٹی نے ہدایت کی کہ تمام وزارتیں، ڈویژنز اور سرکاری کاروباری ادارے سوالنامہ موصول ہونے کے 30 دنوں کے اندر معلومات فراہم کریں گے۔

اجلاس میں نیشنل پاور پارکس منیجمنٹ کمپنی لمیٹڈ کی نجکاری سے متعلق مختلف امور کے جائزے کے لیے کمیٹی کا قیام عمل میں لایا گیا۔

کمیٹی میں وزیراعظم کے مشیربرائے خزانہ، وزیر نجکاری، سیکرٹری خزانہ، مشیرتوانائی اور نیپرا کا نمائندہ شامل ہوگا، کمیٹی کا اجلاس ایک ہفتے کے اندر اندر ہوگا، کمیٹی مختلف مسائل کا جائزہ لے گی اور متعلقہ حلقوں کی مشاورت سے زیرالتوا مسائل کے حل کے لیے طریقہ کار وضع کرے گی۔

Happy
Happy
0 %
Sad
Sad
0 %
Excited
Excited
0 %
Sleepy
Sleepy
0 %
Angry
Angry
0 %
Surprise
Surprise
0 %

Average Rating

5 Star
0%
4 Star
0%
3 Star
0%
2 Star
0%
1 Star
0%

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Next Post

'کشف' ڈراما میری غیر معمولی مقبولیت کی وجہ بنا، حرا مانی

پاکستانی اداکارہ حرا مانی کو اپنے مختلف کرداروں اور صلاحیتوں کی وجہ سے ڈراما انڈسٹری کی صف اول کی اداکاراؤں میں شامل کیا جاتا ہے۔ اور اب انہوں نے حال ہی میں اختتام کو پہنچنے والے ڈرامے ‘کشف’ میں اپنے کردار سے متعلق کہا ہے کہ یہ کردار مشکل ترین […]
HIRA-MAIN-wSD