امریکی حکومت کا ٹک ٹاک کو مزید مہلت نہ دینے کا فیصلہ

ویب ڈیسک
0 0
Read Time:2 Minute, 24 Second

امریکا نے چینی کمپنی بائیٹ ڈانس نے مقبول سوشل میڈیا ایپ ٹک ٹاک کی فروخت کے لیے 4 دسمبر تک کی مہلت دی تھی جو خاموشی سے گزر گئی۔

مہلت ختم ہونے کے باوجود امریکا میں ٹک ٹاک کے آپریشنز پر پابندی نہیں لگائی گئی، اور نہ ہی کوئی بیان جاری ہوا ہے کہ اب کیا ہوگا۔

تاہم امریکی حکومت اور ٹک ٹاک کی انتظامیہ کے دوران مہلت میں اضافے کے بغیر مذاکرات جاری رہیں گے۔

سی نیٹ کی رپورٹ میں یہ دعویٰ ذرائع کے حوالے سے کیا گیا۔

ستمبر میں امریکی حکومت نے اعلان کیا تھا کہ 12 نومبر سے امریکا میں ٹک ٹاک پر پابندی عائد کردی جائے گی، جس کے خلاف امریکی عدالت نے حکم امتناع جاری کیا تھا۔

مگر 12 نومبر کو کامرس ڈیپارٹمنٹ کمیٹی آن فارن انوسٹمینٹ (سی ایف آئی یو ایس) نے ٹک ٹاک کی اس مدت میں 15 دن تک بڑھا کر اسے 27 نومبر کردیا تھا۔

مگر نومبر کے آخری ہفتے میں کمٹی آن فارن انویسٹمنٹ (سی ایف آئی یو ایس) نے ٹک ٹاک کی ملکیت رکھنے والی کمپنی بایٹ ڈانس کو اپنی اپلیکشن کے امریکی آپریشنز فروخت کرنے کے لیے ایک ہفتے کی مہلت دی تھی، جو 4 دسمبر کو ختم ہوگئی۔

بائیٹ ڈانس نے ٹک ٹاک کی فروخت کے حوالے سے سافٹ ویئر کمپنی اوریکل اور ریٹیل کمپنی وال مارٹ سے ابتدائی معاہدہ ستمبر میں کیا تھا مگر اب تک اسے حتمی شکل نہیں دی جاسکی۔

معاہدے کی شرائط کے بشمول کمپنی کے ٹیکنالوجی کنٹرول کے حوالے سے بھی الجھن موجود ہے۔

خبررساں ادارے رائٹرز کے مطاب ٹرمپ انتظامیہ نے ٹک ٹاک کی فروخت کرنے کے حوالے سے بائیٹ ڈانس کو مزید مہلت نہ دیینے کا فیصلہ کیا ہے، تاہم مذاکرات جاری رکھے جایں گے۔

محکمہ خزانہ کے ایک نمائندے نے رائٹرز کو بتایا کہ سی ایف آئی یو ایس بائیٹ ڈانس سے رابطے میں رہ کر تمام معاملات کا حل نکالے گی۔

رپورٹ میں بتایا گیا کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے خود فیصلہ کیا ہے کہ چینی کمپنی کو مزید مہلت نہیں دی جائے گی۔

اس حوالے سے امریکی محکمہ انصاف، وائٹ ہاؤس یا ٹک ٹاک نے کوئی بیان جاری نہیں کیا ہے۔

خیال رہے کہ امریکی صدر کی جانب سے ٹک ٹاک پر پابندی کے صدارتی حکم کے خلاف تو عدالت نے حکم امتناع جاری کیا، مگر صدر کے 14 اگست کے ایگزیکٹیو آرڈر کے تحت ایپ کی فروخت کی شرط ختم نہیں ہوئی۔

نومبر کی ایک رپورٹ کے مطابق امریکی حکومت نے بھی واضح کیا ہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ کی شکست اور نئے صدر کے عہدے سنبھالنے تک قانونی پیچیدگیوں کے باعث فوری طور پر ٹک ٹاک پر پابندی نہیں لگائی جا سکتی اور حکومتی عدالتی فیصلے پر عمل کرے گی۔

ٹیکنالوجی ویب سائٹ ٹیک کرنچ کے مطابق امریکا کے جسٹس اینڈ کامرس ڈپارٹمنٹ نے 12 نومبر کی مدت گزرنے کے بعد واضح کیا کہ فوری طور پر ٹک ٹاک پر پابندی نہیں لگائی جا سکتی۔

Happy
Happy
0 %
Sad
Sad
0 %
Excited
Excited
0 %
Sleepy
Sleepy
0 %
Angry
Angry
0 %
Surprise
Surprise
0 %

Average Rating

5 Star
0%
4 Star
0%
3 Star
0%
2 Star
0%
1 Star
0%

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Next Post

’نیٹ فلیکس‘ کا ’دی کراؤن‘ کو فکشن قرار دینے کا انتباہ جاری کرنے سے انکار

امریکی ملٹی نیشنل اسٹریمنگ ویب سائٹ ’نیٹ فلیکس‘ نے برطانوی حکومت کا اپنی ویب سیریز ’دی کراؤن‘ کو فکشن قرار دینے کا مطالبہ مسترد کردیا۔ برطانوی حکومت نے چند دن قبل ’نیٹ فلیکس‘ سے مطالبہ کیا تھا کہ وہ حال ہی میں ریلیز کی گئی ویب سیریز ’دی کراؤن‘ کے […]
Netflix-refuses-wSD